Skip to content

کسی کے سرد لہجے نے
مری پوروں کی چلمن میں
کچھ ایسے آگ بھر دی ہے
مجھے گھر کی
ہر اِک دیوار سے
بازار تک
نوحے سنائی دیتے ہیں
مرے احساس
کے دامن میں شعلے راکھ بن کر
آسماں کی سمت
رقص کرتے جا رہے ہیں
اور میری آنکھ کی نمکینی
مرے اِس جسم کی مٹی کو
ایسے نم زدہ کرنے لگی ہے
نظر آتے ہیں
مجھ کو چار سو اب
بد گمانی کے دیے روشن
اذیت کی فصیلوں پر
یہ میری ذات کی
تکمیل کا ہے بے سُرا نغمہ
مجھے اِس بے سُرے نغمے
پہ جیون کی کہانی میں
جو میری ذات کا کردار ہے
اُس کو نبھانے کے لیے
کچھ دیر
پیروں میں
اذیت سے چٹختے گھنگھرؤں کو
باندھ کر
اک رقص کی محفل سجانی ہے
یہ میرے راکھ جیون میں
کسی کے برف لہجے کی کہانی ہے
مگر
میں چاہتا ہوں اب
کہ گھنگھرو توڑ ڈالوں
اور
اپنے آپ کو
اِس مہرباں دھرتی کے
دامن میں چھپا کر
ہر طرح کے سرد لہجے سے
ہر اِک احساس سے اور
ہر طرح کے بے سُرے نغموں سے
خود کو دور لے جاؤں