Skip to content

اے صوتِ دل فگار کہاں لے چلوں تجھے

اے صوتِ دل فگار کہاں لے چلوں تجھے
اے دشتِ بے کنار کہاں لے چلوں تجھے

بارِ گزارشات! میں ہجرت نہ کر سکا
ماضی کی یادگار کہاں لے چلوں تجھے

پیڑوں پہ شاخچوں کی خموشی سے تنگ ہوئی
مجھ کو بتا بہار کہاں لے چلوں تجھے

میرا نصیب گردِ سفر میں اٹا رہا
ایسے میں بار بار کہاں لے چلوں تجھے

ہونے لگی جو شام تو دل ڈوبنے لگا
خیموں کے سوگوار کہاں لے چلوں تجھے

اتنا بہت ہے دیکھ لے تصویرِ خوش دلاں
منظر کے آر پار کہاں لے چلوں تجھے