Skip to content

سو قصوں سے بہتر ہے کہانی مرے دل کی

سو قصوں سے بہتر ہے کہانی مرے دل کی
سن اس کو تو اے جان زبانی مرے دل کی

ہر نالے میں یاں ٹکڑے جگر ہوتا ہے بلبل
آسان نہیں طرز اڑانی مرے دل کی

ہونی ہے شہید ایک نہ اک روز تمنا
موقوف ہو کیا مرثیہ خوانی مرے دل کی

پیری میں بھی ملتا ہے جو کمسن کوئی محبوب
کرتی ہے وہیں عود جوانی مرے دل کی

تقسیم کیے پارۂ دل بزم بتاں میں
ہر ایک کے ہے پاس نشانی مرے دل کی

اک بات میں ہو جائے مسخر وہ پری رو
سنتا ہی نہیں سحر بیانی مرے دل کی

ہے ابر تو کیا چاہے فلک کو بھی جلا دے
بجلی میں کہاں شعلہ فشانی مرے دل کی

زلفوں میں کیا قید نہ ابرو سے کیا قتل
تو نے تو کوئی بات نہ مانی مرے دل کی

یہ بار غم عشق سمایا ہے کہ ناسخؔ
ہے کوہ سے دہ چند گرانی مرے دل کی