Skip to content

بت بے‌ درد کا غم مونس ہجراں نکلا

بت بے‌ درد کا غم مونس ہجراں نکلا
درد جانا تھا جسے ہم نے وہ درماں نکلا

آنکھ جب بند ہوئی تب کھلیں آنکھیں اپنی
بزم یاراں جسے سمجھے تھے وہ زنداں نکلا

حسرت و یاس کا انبوہ فغاں کی کثرت
میں تری بزم سے کیا با سر و ساماں نکلا

خون ہو کر تو یہ دل آنکھ سے برسوں ٹپکا
نہ کوئی پر دل ناکام کا ارماں نکلا

آئنہ پیکر تصویر نگاہ مشتاق
جسے دیکھا تری محفل میں وہ حیراں نکلا

مجھ کو حیرت ہے ہوا کیا دم رخصت ہمدم
جان نکلی مرے پہلو سے کہ جاناں نکلا

خوب دوزخ کی مصیبت سے بچے ہم حسرتؔ
اس کا داروغہ وہی یار کا درباں نکلا