Skip to content

تاثیر برق حسن جو ان کے سخن میں تھی

تاثیر برق حسن جو ان کے سخن میں تھی
اک لرزش خفی مرے سارے بدن میں تھی

واں سے نکل کے پھر نہ فراغت ہوئی نصیب
آسودگی کی جان تری انجمن میں تھی

اک رنگ التفات بھی اس بے رخی میں تھا
اک سادگی بھی اس نگہ سحر فن میں تھی

محتاج بوئے عطر نہ تھا جسم خوب یار
خوشبوئے دلبری تھی جو اس پیرہن میں تھی

کچھ دل ہی بجھ گیا ہے مرا ورنہ آج کل
کیفیت بہار کی شدت چمن میں تھی

معلوم ہو گئی مرے دل کو راہ شوق
وہ بات پیار کی جو ہنوز اس دہن میں تھی

غربت کی صبح میں بھی نہیں ہے وہ روشنی
جو روشنی کہ شام سواد وطن میں تھی

عیش گداز دل بھی غم عاشقی میں تھا
اک راحت لطیف بھی ضمن محن میں تھی

اچھا ہوا کہ خاطر حسرتؔ سے ہٹ گئی
ہیبت سی اک جو خطرۂ دار و رسن میں تھی