Skip to content

یوں تو عاشق ترا زمانہ ہوا

یوں تو عاشق ترا زمانہ ہوا
مجھ سا جاں باز دوسرا نہ ہوا

خودبخود بوئے یار پھیل گئی
کوئی منت کش صبا نہ ہوا

میں گرفتار الفت صیاد
دام سے چھٹ کے بھی رہا نہ ہوا

خبر اس بے خبر کی لا دیتی
تجھ سے اتنا بھی اے صبا نہ ہوا

ان سے عرض کرم تو کیا کرتے
ہم سے خود شکوۂ جفا نہ ہوا

ہو کے بے خود کلام حسرتؔ سے
آج غالبؔ غزل سرا نہ ہوا