Skip to content

یہ جو لاچار سی حالت ہے میاں

یہ جو لاچار سی حالت ہے میاں
کربِ ہجرت کی بدولت ہے میاں

اور کچھ دیر میں بجھتا ہے چراغ
اور کچھ دیر غنیمت ہے میاں

کون آباد گہِ دل سے اُٹھے
سب کو آزارِ سکونت ہے میاں

بختِ خُفتہ ہؤا بیدار مِرا
اک ولی کی یہ کرامت ہے میاں

بند گلیوں میں بھٹکتا ہے نگر
ایسے زندان پہ حیرت ہے میاں

میں ہوں بے مایہ! کہاں تاب مری
تو بڑا ہے، تری طاقت ہے میاں