Skip to content

چشمِ حیران میں کوئی خواب رُکا ہوتا ہے

چشمِ حیراں میں کوئی خواب رُکا ہوتا ہے
اور دہلیز پہ مہتاب رُکا ہوتا ہے

کھینچتی ہے متواتر مجھے منزل اور ادھر
دل سرِ منبر و محراب رُکا ہوتا ہے

دشت ہوتی ہوئی آنکھوں کا فُسوں اپنی جگہ
ایسی آنکھوں میں تو سیلاب رُکا ہوتا ہے

یہ پڑاؤ بھی میری زیست کی مجبوری ہے
راہ میں حلقۂِ احباب رُکا ہوتا ہے

موج میں آ کے گزر جاتی ہیں موجیں، لیکن
کوئی گوہر تہِ تالاب رُکا ہوتا ہے