Skip to content

میں نے سجدے میں کیا کلام کیا

میں نے سجدے میں کیا کلام کیا
تیری نامُوس کو سلام کیا

دل بہت گن تھا میانِ جسم
اِس کی ہجرت کا انتظام کیا

خاک اُڑنے لگی تھی جب میری
اُس نے بارش کا اہتمام کیا

عشق مفہوم کھو چُکا تھا یہاں
ہم نے تضحیک کو حرام کیا

خیر ہو اُس نگاہ کی، جس نے
جانے کِتنوں کا قتلِ عام کیا