Skip to content

سونا سونا دل کا مجھے نگر لگتا ہے

سونا سونا دل کا مجھے نگر لگتا ہے
اپنے سائے سے بھی آج تو ڈر لگتا ہے

بانٹ رہا ہے دامن دامن میری چاہت
اپنا دل بھی کسی سخی کا در لگتا ہے

محرومی نے جہاں بسیرا ڈھونڈ لیا ہے
مجھ کو تو وہ گھر بھی اپنا گھر لگتا ہے

میری بربادی میں حصہ ہے اپنوں کا
ممکن ہے یہ بات غلط ہو پر لگتا ہے

جوشؔ ہوں میں دیوانے پن کی اس منزل میں
جہاں رقیب بھی اپنا نامہ بر لگتا ہے