Skip to content

جا تجھے دشت بد دعا دے گا

جا تجھے دشت بد دعا دے گا
شہر کا راستہ بھلا دے گا

وہ بنا کر مجسمہ میرا
شہر کے چوک میں سجا دے گا

مجھے ڈر ہے میں اس کا آنسو ہوں
وہ مجھے خاک میں ملا دے گا

میں اسے بھول بھى نہیں سکتا
اس سے بڑھ کر وہ کیا سزا دے گا

میرى پہچان ہے الگ سے مگر
وہ کسى اور سے ملا دے گا

ابر خود ہے صہیب خانہ بدوش
چاند کو خاک یہ قبا دے گا