Skip to content

دل دیا ہے تو حوصلہ رکھنا

دل دیا ہے تو حوصلہ رکھنا
یعنی طوفان میں دیا رکھنا

ہم نے سینے سے دل نکال دیا
کسی خواہش کا دل میں کیا رکھنا

میری ماں اور میرے حصے میں
کچھ نہ رکھنا مگر دعا رکھنا

کیا بھروسہ شرر، شرارے کا
جگنوؤں سے بھی فاصلہ رکھنا

بندگی بھی وبالِ جاں ہے صہیبؔ
کتنا مشکل ہے اک خدا رکھنا