Skip to content

ابھی شب ہے مئے الفت انڈیلیں

ابھی شب ہے مئے الفت انڈیلیں
مگر دن میں گھروں کے راستے لیں

چلو رک جائیں بہر‌ دید ہم بھی
دریچے پر جھکی جاتی ہیں بیلیں

خدایا کاش یہ ہیرے سی آنکھیں
محبت کی کڑی بازی نہ کھیلیں

ارادہ ہے نہ پہچانیں اسے ہم
تمنا کو یہ ضد باہوں میں لے لیں

بہت عرصہ رہے ہیں ساتھ اس کے
سو اب تنہائی بھی کچھ روز جھیلیں

ہے دل میں ضبط اور آنکھوں میں آنسو
تصادم کو بڑھی آتی ہیں ریلیں

یہ گھر ہیں یا بہ وقت شام ساجدؔ
سواگت کے لئے کھلتی ہیں جیلیں