Skip to content

ایک گھر اپنے لیے تیار کرنا ہے مجھے

ایک گھر اپنے لیے تیار کرنا ہے مجھے
اور اک بستی کو بھی مسمار کرنا ہے مجھے

اس اندھیرے میں چھپانا ہے کوئی دشمن مگر
اس اجالے میں کسی پر وار کرنا ہے مجھے

ایک ندی کے کنارے پر ٹھہرنے کے لیے
شام ہونے تک یہ دریا پار کرنا ہے مجھے

ڈھونڈ لایا ہوں خوشی کی چھاؤں جس کے واسطے
ایک غم سے بھی اسے دو چار کرنا ہے مجھے

باندھنی ہے آخری اک چال سے ساری بساط
اور اس کا داؤ بھی بے کار کرنا ہے مجھے

کس سمندر میں اترنا ہے پڑاؤ کے لیے
کس نگر کو اب گلے کا ہار کرنا ہے مجھے

ایک خواہش ہے جو شاید عمر بھر پوری نہ ہو
ایک سپنے سے ہمیشہ پیار کرنا ہے مجھے

ایک جھونکے کو رواں رکھنا ہے صحن باغ میں
ایک گل کو شامل گفتار کرنا ہے مجھے

ایک انجانی صدا کی کھوج میں چلتے ہوئے
ایک مبہم ربط کو دیوار کرنا ہے مجھے