Skip to content

خواب کا خواب حقیقت کی حقیقت سمجھیں

خواب کا خواب حقیقت کی حقیقت سمجھیں
یہ سمجھنا ہے تو پھر پہلے طریقت سمجھیں

میں جواباً بھی جنہیں گالی نہیں دیتا وہ لوگ
میری جانب سے اسے خاص محبت سمجھیں

میں تو مر کر بھی نہ بیچوں گا کبھی یار کا نام
آپ تاجر ہیں نمائش کو عبادت سمجھیں

میں کسی بیچ کے رستے سے نہیں پہنچا یہاں
حاسدوں سے یہ گزارش ہے ریاضت سمجھیں

میرا بے ساختہ پن ان کے لئے خطرہ ہے
ساختہ لوگ مجھے کیوں نہ مصیبت سمجھیں

فیس بک وقت اگر دے تو یہ پیارے بچے
اپنے خاموش بزرگوں کی شکایت سمجھیں

پیش کرتا ہوں میں خود اپنی گرفتاری علیؔ
ان سے کہنا کہ مجھے زیر حراست سمجھیں