Skip to content

دیپ دل کا جلا کے بیٹھے ہیں

دیپ دل کا جلا کے بیٹھے ہیں
اک تمـاشـا لگا کے بیٹھے ہیں

راس آئـی نہ روشنی ہـم کو
سانحہ اک اُٹھا کے بیٹھے ہیں

آئینے منہ چھـپانے لگتے ہیں
اتنے چہرے لگا کے بیٹھے ہیں

آنکھ بھی تو کہیں سے لا ایسی
خواب تو دیکھ آ کے بیٹھے ہیں

کون آیـا بھـــلا وہاں سے پھر
آپ جس دیس جا کے بیٹھے ہیں

دریا دل اتنے ہیں کہ قطروں کو
ہم سمنـدر بنا کے بیٹھے ہیں

اپنے حصے کی ساری حیرت ہم
آئینوں سے چُرا کے بیٹھے ہیں

منہ لـگانے کے بھی نہیں قابـل
دل سے جن کو لگا کے بیٹھے ہیں

اپنے ملبوں تلے دبے ہیں ہم
اپنی میّت اٹھا کے بیٹھے ہیں