Skip to content

خود سے میری کبھی بنی ہی نہیں

اس پرستاں کی وہ پری ہی نہیں
آنکھ جس شوخ پر جمی ہی نہیں

اے مِرے وقت کے خدا ترے پاس
میری خاطر کوئی گھڑی ہی نہیں

اَبر چھن چھن کے برسے گا اسی پر
جو شناسائے تشنگی ہی نہیں

چڑھتی آبادی پر ہیں ششدر سب
شہر سارے میں آدمی ہی نہیں

اوڑھ کے بیٹھا ہوں وہاں بھی سکوت
جس جگہ رسمِ خامشی ہی نہیں

تجھ میں کب آئی زندگانی سی خُو
میری ہو کر بھی تُو مِری ہی نہیں

ہے نظر جسکی شرق و غرب پہ یار
مجھ کو وہ آنکھ دیکھتی ہی نہیں

اک صدی کھود کر ہُوا معلوم
یہ صدی تو مِری صدی ہی نہیں