Skip to content

یہ نشانی بھی بدلتے ہوئے منظر کی ہے

یہ نشانی بھی بدلتے ہوئے منظر کی ہے
خامی جس خوبی سے یاروں نے اجاگر کی ہے

مثلِ مجنوں مجھے حاجت ہی نہیں صحرا کی
رائیگانی مرے حجرے میں جہاں بھر کی ہے

اِس لئے بھی یہاں کم کم ہیں یہ آئینہ بدن
آنکھ ہر ایک ہی اس شہر میں پتھر کی ہے

ساتھ مرہم کے ملے گا تجھے سایہ بھی یہاں
میرے دشمن ابھی دیوار مرے گھر کی ہے

مت بُرا جان کہ اس شہرِ گراں گوش میں اب
بات اُڑتی ہے وہی، جو یہاں بے پر کی ہے

جی میں آتا نہیں تو دیکھ نہیں مان مری
کب کہا میں نے، مِری بات پیمبر کی ہے

جامِ جم میں بھی عزیرؔ ایسی حلاوت ہے کہاں
جو حلاوت مرے ٹوٹے ہوئے ساغر کی ہے