Skip to content

یہ لگائی بجھائی مولانا

یہ لگائی بجھائی مولانا
آپ کی کُل کمائی مولانا

مر کے بھی دیکھنا نہیں مرنی
خواہشِ خود نمائی مولانا

ساری اچھائی آپ کے دم سے
سب کے دم سے برائی مولانا

سبھی عیش و نشاط اپنے لئے
ہم کو درسِ گدائی مولانا

دیکھ منڈی سجی تفرقوں کی
کس قدر ہے کمائی مولانا

تیرے بس میں کہاں تراشِ جہاں
اے مِرے میڈیائی مولانا