Skip to content

اور واعظ کے ساتھ مل لے شیخ

اور واعظ کے ساتھ مل لے شیخ
کھول آپس کے بیچ کلے شیخ

تیر سا قد کمان کر اپنا
کھینچ فاقوں کے بیچ چلے شیخ

چھوڑ تسبیح ہزار دانوں کی
ہاتھ میں اپنے ایک دل لے شیخ

بھونک مت غیر پر نہ کر حملہ
مرد ہے نفس پر تو پل لے شیخ

خال خوباں سیں تجھ کوں کیا نسبت
بس ہیں بکرے کے تجھ کو تلے شیخ

اس سے سنگیں دلاں کا شوق نہ کر
مت تو سینے پہ اپنے سل لے شیخ

چھوڑ دے زہد خشک یہ پیالہ
خوش ہو کر آبروؔ سے مل لے شیخ