Skip to content

محفل عشق میں جب نام ترا لیتے ہیں

محفل عشق میں جب نام ترا لیتے ہیں
پہلے ہم ہوش کو دیوانہ بنا لیتے ہیں

روز اک درد تمنا سے نیا لیتے ہیں
ہم یونہی زندگیٔ عشق بڑھا لیتے ہیں

دیکھتے رہتے ہیں چھپ چھپ کے مرقع تیرا
کبھی آتی ہے ہوا بھی تو چھپا لیتے ہیں

رنگ بھرتے ہیں وفا کا جو تصور میں ترے
تجھ سے اچھی تری تصویر بنا لیتے ہیں

دے ہی دیتے ہیں کسی طرح تسلی سیمابؔ
خوش رہیں وہ جو مرے دل کی دعا لیتے ہیں