Skip to content

آنکھ سے ٹپکا جو آنسو وہ ستارا ہو گیا

آنکھ سے ٹپکا جو آنسو وہ ستارا ہو گیا
میرا دامن آج دامان ثریا ہو گیا

اس کے جی میں کیا یہ آئی یہ اسے کیا ہو گیا
خود چھپا عالم سے اور خود عالم آرا ہو گیا

بندۂ معنیٰ کہاں صورت کا بندا ہو گیا
سوچتا ہوں مجھ کو کیا ہونا تھا میں کیا ہو گیا

پھر تصور نے بڑھا دی نالۂ موزوں کی لے
پھر سواد فکر سے اک شعر پیدا ہو گیا

اب کہاں مایوسیوں میں جھلکیاں امید کی
وہ بھی کیا دن تھے کہ تیرا غم گوارا ہو گیا

جان دے دی میں نے تنگ آ کر وفور درد سے
آج منشائے جفائے دوست پورا ہو گیا

برہمن کہتا تھا برہم شیخ بول اٹھا احد
حرف کے اک پھیر سے دونوں میں جھگڑا ہو گیا

وحدت و کثرت کے جلوے خلقت انساں میں دیکھ
ایک ذرہ اس قدر پھیلا کہ دنیا ہو گیا

بربریت کی جہاں میں گرم بازاری ہوئی
آدمیت کی رگوں میں خون ٹھنڈا ہو گیا

آشیاں بننے نہ پایا تھا کہ بجلی گر پڑی
باغ ابھی بسنے نہ پایا تھا کہ صحرا ہو گیا

آ گیا سیلاب بالیں تک وفور گریہ سے
رحم کر یا رب کہ پانی سر سے اونچا ہو گیا

اتفاق وقت تھا اپنا فروغ آشیاں
جب کوئی جگنو چمک اٹھا اجالا ہو گیا

دل کھنچا جتنا قفس میں آشیانے کی طرف
دور اتنا ہی قفس سے آشیانا ہو گیا

ہم مسافر تھے ہمارا مستقر کوئی نہ تھا
رات جب آئی جہاں آئی بسیرا ہو گیا

ہو گئے رخصت رئیسؔ و عالؔی و واصفؔ نثارؔ
رفتہ رفتہ آگرہ سیمابؔ سونا ہو گیا