Skip to content

ایسی پر سوز مرے خواب کی تعبیر ہوئی

ایسی پر سوز مرے خواب کی تعبیر ہوئی
نیند ٹوٹی تو اداسی مجھے تعمیر ہوئی

آخری بار اُسے دیکھنے کا اذن ملا ۔۔۔
اور مجھے آخری لمحے میں بھی تاخیر ہوئی

کیسے سادات نے اس وقت سنبھالا پردہ
راکھ خیموں کی جلی دیکھی تو تفسیر ہوئی

اک صدا روتی ہوئی دل کے عزا خانے میں
ایسی لپٹی کہ مرے پاؤں کی زنجیر ہوئی

اس نے دیکھا مجھے اک بار محبت سے ذرا
چاروں اطراف سے وحشت مِری تسخیر ہوئی

وہ گیا ساتھ مِری شوخ مزاجی بھی گئی
اور پھر عمر مِری سوگ کی تصویر ہوئی