Skip to content

کون کہتا ہے دل فگار تھا میں

کون کہتا ہے دل فگار تھا میں
دشتِ وحشت کا پیروکار تھا میں

خواب میں تو بچھڑ گیا مجھ سے
آنکھ کھلنے پہ اشکبار تھا میں

رنگ اور نور کا ملاپ تھا وہ
خاکدانوں کی یادگار تھا میں

چاندنی چاند سے ہراساں لگی
رات اس درجہ سوگوار تھا میں

شام ہونے لگی تھی خیمے میں
رونے والوں کا پہرہ دار تھا میں

سرِ دیوار لکھ رہا تھا غزل
پسِ دیوار تہِ بار تھا میں

خوشنما شہر تھا محبت کا
بد نما بابِ انتشار تھا میں