Skip to content

دل میں تو بہت کچھ ہے زباں تک نہیں آتا

دل میں تو بہت کچھ ہے زباں تک نہیں آتا
میں جتنا چلوں پھر بھی یہاں تک نہیں آتا

لوگوں سے ڈرے ہو تو مرے ساتھ چلے آؤ
اس راستے میں کوئی مکاں تک نہیں آتا

اس ضد پہ ترا ظلم گوارا کیا ہم نے
دیکھیں کہ تجھے رحم کہاں تک نہیں آتا

ایک ایک ستارہ مری آواز پہ بولا
میں اتنی بلندی سے وہاں تک نہیں آتا

آنسو جو بہیں سرخ تو ہو جاتی ہیں آنکھیں
دل ایسا سلگتا ہے دھواں تک نہیں آتا