Skip to content

لباسِ زیست پہ چھلکا اگر ایاغِ اجل

لباسِ زیست پہ چھلکا اگر ایاغِ اجل
تو ایک عمر چمکتا رہے گا داغِ اجل

اسے بھی موت نے آغوش میں جگہ دے دی
جسے کبھی بھی میسر نہ تھا فراغِ اجل

مکانِ دل سے کوئی کوچ کرنے والا ہے
کہ اب منڈیر پہ میں دیکھتا ہوں زاغِ اجل

کہیں سراغ رساں اس کی رفت روک نہ دیں
کچھ اس لیے بھی تو ممکن نہیں سراغِ اجل

خبر نہیں ہے کہ کس کی لپک تمام کرے
ادھر چراغِ نظر ہے اُدھر چراغِ اجل

اسے غرض ہی نہیں موسموں سے کوئی حسینؔ
بس ایک سوگ کا پھل دے رہا ہے باغِ اجل