Skip to content

کب یہ دل جستجو سے سبز ہوا

کب یہ دل جستجو سے سبز ہوا
گردشِ کو بہ کو سے سبز ہوا

میں کہ اک دشتِ بے کنار تھا جو
پھر تری آب جُو سے سبز ہوا

اب کسی رُت سے اس کو کیا ہو غرض
جو بھی تیری نمو سے سبز ہوا

آئینہ آئینے کے سامنے تھا
میں رخِ روبرو سے سبز ہوا

ماں نے مجھ سے کہا حسینؔ فرید
میں اسی گفتگو سے سبز ہوا